Advertisement

وہ لوگ جن کے ہاتھ کی پہلی انگلی ٹیڑھی ہوتی ہے، یہ لوگ کیسے ہوتے ہیں ،جان کر آپ دم بخود رہ جائیں گے

Advertisements

میرے ایک پروڈیوسر دوست کوڈرامہ لکھوانا تھا اور وہ کسی پرفیکٹ ڈرامہ رائٹر کا متلاشی تھا ۔کسی نے ٹی وی کے ایک ڈرامہ رائٹرکو ان کے پاس بھیجا ،اتفاق سے میں بھی وہاں موجود تھا ۔ دونوں کی بات چیت سنتا رہا ،اپنی بری عادت کے ہاتھوں مجبور ہوکر میں ان صاحب کے ہاتھوں کو فاصلے سے بھی دیکھتا رہا ۔ان کے ایک ہاتھ کی انگشت شہادت دوسری انگلی کی جانب غیر معمولی طور جھکی ہوئی تھی ۔قمر کا ابھار بھی تنگ تھا ۔وہ ہنر مند لکھاری تھے اور جہاں تک مجھے گمان ہورہا تھا ان میں پرفیکشن نہیں تھی کیونکہ وہ کنفیوژڈ شخصیت تھے۔ان میں منطق اور تخیل کو لیکر چلنا اور اسے ثابت کرنا مشکل لگ رہا تھا ۔ان کے جانے کے بعد دوست نے شکر کی سانس لی اور کہنے لگے کہ ان کا پہلا بنیادی کام تو ختم ہوا،

ایک اچھا رائٹر مل گیا ہے ۔مجھ سے پوچھا کہ آپ کا کیا خیال ہے ،اچھے انسان ہیں ہیں ناں ۔میں نے کہا انسان واقعی اچھے اور شریف ہیں لیکن جس خیال وگہرائی کے تحت آپ ڈرامہ لکھوانا چاہ رہے ہیں مجھے گمان ہے کہ یہ اس کی صلاحیت نہیں رکھتے ۔میری نظر میں یہ کنفیوژ ہوجانے والے انسان ہیں ۔کٹر حاسدانہ مزاج رکھتے ہیں ۔مسائل حل نہیں کرتے ،الٹا مسائل پیدا کردیتے ہیں ۔اور اسکو حق بجانب سمجھتے ہیں ۔موصوف نے میری بات کو یکسر رد کردیا اور اتفاق سے جب ڈرامہ شروع ہونے سے پہلے سکرپٹ پر کام شروع ہوا تو ڈرامہ رائٹر ان کے درد سر بن گیا ۔وہ جو بھی کہانی تیار کرکے لاتے،ہمارے پروڈیوسر دوست کو پسند نہ آتی کیوں کہ وہ جس خیال کے مطابق کہانی تیار کروارہے تھے ،وہ صاحب اس کو مکمل طور پر سمجھنے کے بعد ضابطہ تحریر میں نہیں لاپارہے تھے۔نتیجہ میں ڈرامہ رائٹر بدلنا پڑا ۔اور اس تگ و دو اور سردردی میں ایک سال گزر گیا ۔میں یہ نہیں کہتا کہ وہ ڈرامہ نگار صاحب ڈرامہ لکھ ہی نہیں سکتے تھے ۔وہ عام چھوٹی موٹی کہانی تو لکھ لیتے تھے لیکن کسی جاندار کمرشل ڈرامے میں جان ڈالنا ان کے بس میں نہیں تھا ۔دراصل ہاتھوں کا ہر ابھارجہاں شخصیت کے مخلتف زاویوں پر روشنی ڈالتا ہے وہاں انگوٹھے اور انگلیوں کا بھی اپنا بنیادی کردار ہوتا ہے ،انکی ساخت ،جھکاو اور ان کی پوروں تک کا مطالعہ کرنے کے بعد ہی کسی کی شخصیت پر جامع بات کی جاسکتی ہے ۔ہاتھوں کی پانچوں انگلیوں کا بھی اپنا اپنا جداگانہ مقام ہوتاہے ،ان میں پہلی انگلی جسے انگشت شہادت بھی کہا جاتا ہے جبکہ پامسٹری میں یہ جیوپیٹر فنگر کہلاتی ہے،اس انگلی پر انسان کی شخصیت اور اسکے فطری صلاحیتوں کے کئی اشارے ملتے ہیں ۔جیسا کہ بہت سے لوگوں میں انکی پہلی انگلی کی پور کا دوسری انگلی کی طرف جھکاو پایا جاتا ہے ۔یہ ایسے لوگوں کی نشانی ہوتی ہے جو فطری طور پر اند ر سے ان دیکھے خو ف کا شکار ہوتے ہیں۔بات اس تک موقوف نہیں رہتی ۔پوری انگلی جب دوسری انگلی کی طرف خمیدہ ہوتو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ ایسا انسان شرمیلا ہے،اسے بولنے میں ہچکچاہٹ ہوتی ہے ۔یہ لوگ اپنی ماوں سے شدید محبت کرتے ہیں ۔ایسے لوگ دوسروں پر انحصار کرتے ہیں۔جب تعلیم و تربیت کے بعد یہ لوگ کسی مقام پر پہنچ جاتے ہیں تو اپنے کام پر انتہائی توجہ دیتے ہیں۔

ان میں اپنی ذات کے حوالہ سے جارحیت پائی جاتی ہے اور اس میں کافی سنجیدہ ہوتے ہیں ،ان میں جیلسی بھی پائی جاتی ہے۔اگر پہلی انگلی کی پہلی پور دوسری انگلی کی جانب جھکی ہوتویہ ایسے انسان کا پتہ دیتی ہے جو احتیاط مدنظررکھ کر کام کرتا ہے ۔اس میں خوف کا عنصر پایا جاتا ہے لیکن ہر کام میں احتیاط لازم برتے گا ،وہ اپنی ذات کے بارے بھی تضاد کا شکار ہوجاتا ہے ،خود کو پوری طرح سمجھنے سے قاصر رہتا ہے ۔ جب کوئی خیال اسکے ذہن میں پیدا ہوتا ہے تو اسکی مکمل شکل اس پر واضح نہیں ہوتی ۔

Advertisement

Source Dailypakistan.com.pk
x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings