Advertisement

لندن سے بڑی خبر ، منی لانڈرنگ کے الزام میں بڑی شخصیت گرفتار

Advertisements

برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے پیر کے روز پاکستانی سیاستدان اور ان کی اہلیہ کو منی لانڈرنگ تحقیقات میں سرے سے گرفتار کیا اور اب انکشاف ہوا ہے کہ گرفتار ہونے والے شخص کا نام فرحان جونیجو ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق انکشات ہوا ہے کہ برطانوی حکام کی جانب سے گرفتار ہونے والا شخص فرحان جونیجو ہے جو ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان (ٹڈاپ) میں منی لانڈرنگ سکینڈل میں ملوث ہے۔ فرحان جونیجو وفاقی وزیر کامرس اور پاکستان پیپلز پارٹی رہنماءمخدوم امین فہیم مرحوم کا پرسنل سیکرٹری تھا۔

فرحان جونیجو کو این سی اے کے انٹرنیشنل کرپشن یونٹ نے سرے کے علاقے سے گرفتار کیا اور پھر ضمانت پر رہا کر دیا گیا۔ ذرائع کے مطابق دونوں کو پوچھ گچھ کے بعد ضمانت پر رہا کر دیا گیا اور مزید تحقیقات جاری ہیں۔ نجی ٹی وی جیو نیوز کے مطابق ٹڈاپ سکینڈل میں اربوں روپے کا غبن ہوا اور رقم منی لانڈرنگ کے ذریعے بیرون ملک منتقل کی گئی۔ سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی اور وزیر تجارت مخدوم امین فہیم مرحوم کا نام بھی ٹڈاپ سکینڈل میں ہے اور فرحان جونیجو کو امین فہیم مرحوم کا مبینہ فرنٹ مین بھی بتایا جاتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق ایف آئی اے ٹڈاپ سکینڈل کی تحقیقات میں مصروف ہے اور ذرائع کا کہنا ہے کہ ایف آئی اے نے انٹرپول کے ذریعے ریڈوارنٹ جاری کروائے تھے جن پر عمل کرتے ہوئے برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے دونوں کو گرفتار کیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ گرفتاری پاکستان اور برطانیہ کے درمیان ہونے والے حالیہ معاہدوں کا نتیجہ ہے اور دونوں کو ضمانت پر رہا کیا گیا ہے تاہم مزید تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ پاکستان ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی (ٹڈاپ)میں اربوں روپے کے سکینڈل کے مرکزی کردار فرحان جونیجو اور اہلیہ کی برطانیہ میں گرفتاری میں نیب اور ایف آئی اے کی معاونت حاصل رہی ہے مگر یہ فرحان جونیجو کون ہیں اور ٹڈاپ سکینڈل میں کتنے ارب روپے کا گھپلا ہوا؟ جان کر ہی آپ کے ہوش اڑ جائیں گے۔

نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق فرحان جونیجو ٹڈاپ سکینڈل کا مرکزی کردار ہے جس نے 2013ءمیں پاکستان ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی میں غبن کرتے ہوئے 750 ملین روپے کی رقم بیرون ملک منتقل کی تھی اور پاکستان سے امریکہ فرار ہو گیا۔ فرحان جونیجو نے دبئی، امریکہ، سوئٹزرلینڈ کے بعد رقم برطانیہ منتقل کی تاہم اب اسے برطانیہ میں مانیٹرنگ کرنے کے بعد گرفتار کیا گیا ہے۔ فرحان جونیجو ٹڈاپ سکینڈل میں امین فہیم مرحوم کا فرنٹ مین تھا جبکہ اس سکینڈل میں سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کا بھی نام ہے۔ ٹڈاپ سکینڈل میں 7 ارب کی رقم حوالہ ہنڈی کے ذریعے امریکہ منتقل کی گئی اور فرحان جونیجو نے یہ رقم اپنی والدہ، اہلیہ، بھائی اور بہن کے اکاﺅنٹس میں منتقل کی۔ فرحان جونیجو سندھ حکومت سے ڈیپوٹیشن پر وزارت تجارت کا ڈائریکٹر تھا جس کے پاس پاکستان کیساتھ برطانوی شہریت بھی تھی۔ ایف آئی اے نے ٹڈاپ سکینڈل کی تفتیش کے دوران فرحان جونیجو کیخلاف حوالہ، ہنڈی کا مقدمہ بھی درج کیا تھا۔ رپورٹ کے مطابق فرحان جونیجو نے 250 ملین روپے دبئی سے برطانیہ بھیجے۔ یہ رقم2011ءمیں اسسٹنٹ ڈائریکٹر پرائیویٹ بینکنگ کے ذریعے منتقل کی گئی اور پھر 2012ءمیں 35 ملین ڈالر دبئی ایکسچینج کمپنی کو بھیجے گئے جہاں سے یہ رقم مسز شمیم نبی کے سوئس اکاﺅنٹ میں منتقل ہوئی۔ رپورٹ کے مطابق 35 سے 20 ملین ڈالر واپس دبئی بھیجے گئے جبکہ ملزم نے وال سٹریٹ ایکسچینج سینٹر امریکہ کے ذریعے 10ہزار ڈالر امریکہ میں ہی مقیم ریحان جونیجو کے اکاﺅنٹ میں بھیجے۔ فرحان جونیجو نے 87 لاکھ روپے دبئی سے برطانیہ بھیجے اور ایک کروڑ 18 لاکھ سے زائد رقم اپنے دبئی کے اکاﺅنٹ میں جمع کرائی۔

ملزم نے 7 لاکھ درہم لندن کی رئیل سٹیٹ کمپنی کو بھیجے اور یہ رقم دبئی سے مسز بینش اینڈ قریشی کے اکاﺅنٹس میں منتقل ہوئی۔ایف آئی اے تفتیش کے مطابق شمیم نبی، فرحان جونیجو کی والدہ ہیں اور مسز بینش قریشی اہلیہ ہے جبکہ ریحان جونیجو اور افشاںجونیجوملزم کے بھائی اور بہن ہیں۔ تفتیش کے مطابق فرحان جونیجو نے اس رقم سے لندن میں جائیداد خریدی

Advertisement

Source DailyPakistan.com.pk
x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings