Advertisement

خراٹوں سے جان لیوا مرض کا خطرہ

Advertisements

تحقیق کے مطابق انتہائی بلند آواز میں خراٹے یا دوران نیند سانس کے لمحاتی تعطل جسے سلیپ apnoea بھی کہا جاتا ہے کھوپڑی کو 1.23 ملی میٹر پتلا کردیتا ہے۔محققین کا دعویٰ تھا کہ کھوپڑی میں ایک ملی میٹر کمی بھی جان لیوا مسائل کاباعث بن سکتی ہے اور اس سے دماغی سیال لیک ہونے کا خطرہ بڑھتا ہے جو دماغ اور ریڑھ کی ہڈی کو تحفظ فراہم کرتا ہے اس سیال کے لیک ہونے پر ڈیمینشیا جیسی علامات سامنے آسکتی ہیں اس سے کوما، فالج جبکہ جان بھی جا سکتی ہے ۔تحقیق کے مطابق عام طور پر دماغی سیال لیک ہونے کا خطرہ موٹے لوگوں اور درمیانی عمر کے افراد میں ہوتا ہے ۔

خراٹوں سے جان لیوا مرض کا خطرہ تحقیق کے مطابق انتہائی بلند آواز میں خراٹے یا دوران نیند سانس کے لمحاتی تعطل جسے سلیپ apnoea بھی کہا جاتا ہے کھوپڑی کو 1.23 ملی میٹر پتلا کردیتا ہے۔محققین کا دعویٰ تھا کہ کھوپڑی میں ایک ملی میٹر کمی بھی جان لیوا مسائل کا باعث بن سکتی ہے اور اس سے دماغی سیال لیک ہونے کا خطرہ بڑھتا ہے جو دماغ اور ریڑھ کی ہڈی کو تحفظ فراہم کرتا ہے اس سیال کے لیک ہونے پر ڈیمینشیا جیسی علامات سامنے آسکتی ہیں اس سے کوما، فالج جبکہ جان بھی جا سکتی ہے ۔تحقیق کے مطابق عام طور پر دماغی سیال لیک ہونے کا خطرہ موٹے لوگوں اور درمیانی عمر کے افراد میں ہوتا ہے ۔

پرفیکٹ بوائز کی ٹیم نے پاکستان میں لوگوں کےساتھ دیکھیں کیا کیا ویڈیو ضرور دیکھیں

Advertisement

Source dailyausaf.com
x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings