Advertisement

’’اب کشمیر ہی نہیں بلکہ بھارت بھی بنے گا پاکستان ‘‘ کرتار پور بارڈر کے کھلتے ہی بھارت میں آج عجیب و غریب کام ہو گیا ، پورے ہندوستان میں ہلچل مچ گئی

Advertisements

بھارتی شہر کولکتہ کے نئے منتخب میئر اس وقت ایک تنازع کا شکار ہو گئے جب سوشل میڈیا پر ان کے پارٹی پرچم کی تصاویر وائرل ہو گئیں۔بھارتی مئیر پر الزام عائد کیا جا رہا ہے کہ انہوں نے شہر کی سڑکوں پر پاکستانی پرچم لگا دئیے ہیں۔میڈیا رپورٹس کے مطابق اس پرچم کا رنگ سبز ہے جب کہ اس کے درمیان میں چاند اور ستارہ بھی بنا ہوا ہے۔
تاہم پاکستانی جھنڈا اس سے مخلتف ہے کیونکہ پاکستان کے قوم پرچم کے بائیں طرف سفید رنگ کا پیچ بنا ہوتا ہے۔پاکستان کے قومی پرچم گہرے سبز اور سفید رنگ پر مشتمل ہے جس میں تین حصے سبز اور ایک حصہ سفید رنگ کا ہوتا ہے۔سبز رنگ مسلمانوں اور سفید رنگ پاکستان میں رہنے والی اقلیتوں کا ظاہر کرتا ہے۔جب کہ اس پرچم کے درمیان میں چاند اور ستارہ بھی بنا ہوا ہے۔

سفید رنگ کے چاند کا مطلب ترقی اور ستارے کا مطلب روشنی ہے اور یہ علم کو ظاہر کرتا ہے۔تاہم بھارتی مئیر کی جانب سے پارٹی پرچم پاکستانی پرچم کی طرز پر بنانے کے بعد انڈیا میں ایک نیا تنازع شروع ہو گیا ہے ماضی میں اس طرح کے واقعات پیش آ چکے ہیں جب پاکستان اور بھارت کے مابین کرکٹ میچوں کے دوران ممبئی شہر میں پاکستان پرچم لگائے گئے تھے۔اور جب حال ہی میں بالی ووڈ کے سپر اسٹار سلمان خان کو اپنی اگلی فلم میں واہگہ بارڈر پر کچھ سین شوٹ کرنے تھے اور اس دوران پاکستانی جھنڈا بھی دکھانا تھا۔

بالی ووڈ کے دبنگ اداکار سلمان خاناپنی فلم بھارت کی وجہ سے نئے تنازع کا شکار ہوگئے تھے۔، فلم کی کہانی تو ابھی منظرعام پر نہیں آئی تاہم فلم میں واہگہ بارڈر کے مناظر بھی شامل ہیں۔ لیکن سیکیورٹی مسائل کی وجہ سے واہگہ بارڈر پر شوٹنگ کرنا ممکن نہیں تھا لہذا فلم کی ٹیم نے بھارتی پنجاب کے ایک گاں میں مقامی پنچایت کی مدد سے واہگہ بارڈر کا سیٹ لگایا ہے۔

گاں کے مقامی کسانوں اور تاجروں کو واہگہ بارڈر کا سیٹ لگنے کے باعث ہونے والے نقصان کا ازالہ بھی کیا گیا ہے لیکن واہگہ بارڈر پاکستانی پرچم کے بغیر ادھورا ہے لہذا وہاں پاکستانی پرچم لہرایا جانا ضروری ہے اور یہیں سے تنازعے کی شروعات ہوئی۔ فلم بھارت کی ٹیم کے ذرائع کا کہنا ہے کہ بھارتی سرزمین پر پاکستانی جھنڈے کی پرچم کشائی نے بہت سی مقامی تنظیموں کو پریشان کردیا ہے، ان کا کہنا ہے کہ ہمیں پہلے بھی کشمیر اور ممبئی کی کئی جگہوں پر اس طرح کی صورتحال سے پریشانی تھی جب پاک بھارت میچوں کے دوران پاکستانی پرچم رکھے گئے۔ لہذا مقامی تنظیموں نے نہ صرف سلمان خان کے خلاف شکایت درج کرادی بلکہ اس ہوٹل کا بھی گھیرا کرلیا جہاں سلمان خان ٹھہرے ہوئے تھے، حالانکہ پاکستانی پرچم صرف فلم کے لیے لہرایا جائے گا لیکن مقامی لوگ اس بات کو نہیں سمجھ رہے۔

Advertisement

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings