Advertisement

پاکستانی اسکولوں میں بے ہودگی اور بے شرمی کی انتہا ہوگئی ، ذمہ دار کون ؟

Advertisements

ہمارا  میڈیا  طے کرتا  ہے کہ  ہمیں کب ،کیسے  اور کس  لباس  اور  فیشن  کا  انتخاب  کرنا  ہے۔ہمارے  ڈرامے  کسی  اسلامی  مملکت  کی  عکاسی  کرنے  کے  بجائے  فحاشی و بے حیائی  کو  فروغ  دینے  میں  روز بروز  ترقی  کرتے  جا رہے  ہیں۔ہمارے  تعلیمی  معیار  کا  یہ  عالم  ہے کہ  او لیول میں  تیسری  جماعت  کے  نصاب  میں  داستانِ عشق و محبت  پڑھا  کر  ننھے  ذہنوں  میں  بے حیائی  ڈال  کر  انھیں  گمراہ  کیا  جارہا  ہے ۔بعض  اسکول  اور  کالجوں  کے  یونیفارم  اور  مخلوط ماحول  بھی  اس  میں  اپنا  کردار  ادا  کر ر ہے  ہیں۔    یہ  ملک  کلمے  کی  بنیاد  پر  حاصل  کیا  گیا  تھا  اور  جس  بے حیائی  کو  مٹانے  کیلئے  نبی آخر الزماں  محمد صلی اللہ علیہ وسلم  کو  مبعوث  کیا  گیا  ان  کے  طریقے  کو  چھوڑ  کر  ہم  آج  میڈیا  پر  دکھائے  جانے  والی  چیزوں کو  اپنانے  میں  فخر  محسوس  کرتے  ہیں ۔تہواروں  اور  شادی بیاہ  کو  سادگی  سے  کرنے  کے  بجائے  مغربی  تہذیب  کے  دلدادہ  ہوئے  جا رہے  ہیں  اور  جو  کچھ  حیا  معمولِ زندگی  میں  باقی  رہ  جاتی  ہے  وہ  یہاں  ختم  کر دیتے  ہیں۔اس  وقت  مغربی  استعمار  سے   زیادہ ہمیں  سب  سے  بڑا  خطرہ  نظریاتی  اور  ثقافتی  میدان  میں  در پیش  ہے۔

وہ  ہمارے  عقائد  اور  ایمان  کو  کمزور  اور  ہماری  تہذیب و ثقافت  کو  تبدیل  کرنا  چاہتے  ہیں ۔روشن خیالی   کے  نام  پر  مسلمانوں  سے  کہا  جا رہا  ہیکہ  تم  ہمارے  کلچر  کو  قبول کرلو۔ ان  کے  خیال  میں روشن خیالی   یہ  ہے کہ  مسلمان  اپنی  شناخت  سے   دستبردار  ہو جائیں  اور  قرآن و سنت  کے  قوانین  کو  تبدیل  کر دیا  جائے۔ یہی  وہ  وقت  ہے  جب  ہمیں  ہوش  کے  ناخن  لینے  چاہئیں  اور  اپنی  آنکھوں  پر  سے  آزادی  اور  ذہنوں  پر  سے  غلامی  کا  پردہ  ہٹا  کر  بے حیائی  اور  عریانی  سے  نکل  کر  ‘حیا ‘کا  دامن  تھام  لینا  چاہئے  تاکہ  ہماری  اصل  کے  ساتھ  انسانیت  کی  بقاء  بھی  قائم  رہ  سکے۔

ہمارا خاندانی نظام مغرب کا خاص ہدف ہے، وہ اس کا شیرازہ بکھیرنے کیلئے خواتین کو اکساتے ہیں، ان کے نزدیک روشن خیالی یہ ہے کہ مسلمان اپنی شناخت سے دستبردار ہو جائیں

Advertisement

Source YouTube
x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings