Advertisement

’’قتل کی تفتیش مکمل ‘‘ پورے ایک مہینے اور 2دن بعد مولانا سمیع الحق کے بارے دھماکہ خیز رپورٹ جاری کر دی گئی ْْ

Advertisements

پورے ایک مہینے اور 2دن بعد مولانا سمیع الحق کے بارے دھماکہ خیز رپورٹ جاری کر دی گئی ۔۔ جمیعت علمائے اسلام (س) کے سربراہ مولانا سمیع الحق کے قتل کی تحقیقات کے بعد پولیس نے عبوری چالان پیش کر دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق ایس ایچ او تھانہ ائیر پورٹ نے جمیعت علمائے اسلام (س) کے سربراہ مولانا سمیع الحق کے قتل کا عبوری چالان ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج راولپنڈی کے روبرو پیش کیا۔ پولیس کی جانب سے عبوری

چالان قتل کی واردات کے 1 ماہ 2 دن بعد پیش کیا گیا جو 3 صفحات پر مشتمل ہے۔ پیش کیے جانے والے چالان میں مقدمے کو اندھا قتل قرار دیتے ہوئے کسی ملزم کو نامزد نہیں کیا گیا۔ چالان میں کہا گیا کہ دوران تفتیش 13 مشکوک افراد شامل تفتیش کئے گئے، مشکوک افراد کے ڈی این اے اور پولی گرافک ٹیسٹ کروائے گئے لیکن ملزمان کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ملا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ تاحال ملزمان کی تلاش جاری ہے اور اس سلسلے میں ٹیمیں بھی تشکیل دی گئی ہیں۔ چالان میں مزید بتایا گیا کہ مولانا سمیع الحق کا چہرہ، ماتھا، کاندھے، پیٹ اور گال شدید زخمی تھے جبکہ ان کے پوسٹ مارٹم کا لازمی قانونی تقاضا جبراً پورا نہیں کرنے دیا گیا جس سے تحقیقات میں مشکل پیش آئی۔ یاد رہے کہ گذشتہ ماہ نامعلوم ملزمان جمیعت علمائے اسلام (س) کے سربراہ مولانا سمیع الحق کے گھر میں گھُسے اور ان پر چاقوؤں کے وار کیے۔ قاتلانہ حملے کے وقت گھر میں مولانا سمیع الحق کے علاوہ اور کوئی موجود نہیں تھا، ڈرائیور اور ملازم نے گھر واپسی پر مولانا سمیع الحق کو خون میں لت پت دیکھا تو فوری طور پر اسپتال منتقل لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے شہید ہو گئے۔مولانا سمیع الحق کے قتل کا مقدمہ ان کے بیٹے حامد الحق کی مدعیت میں نامعلوم ملزمان کے خلاف تھانہ ایئر پورٹ میں درج کیا گیاتھا جس پر پولیس نے تحقیقات کا آغاز کیا تھا۔

Advertisement

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings