Advertisement

وہ وقت جب یزیدی لشکر نے حضرت امام حسینؓ کے لشکر سے اونٹ لیکر ذبح کیا اور اسکا گوشت پکایا تو ۔۔۔ میدان کربلا کا ایک عبرت ناک واقعہ

Advertisements

واقعہ کربلا میں عذاب الٰہی بدبختوں سے دور نہیں رہا بلکہ کھل کر انہیں یہ نشانیاں دکھائی گئی تھیں کہ وہ آپ رسول ﷺ کے ساتھ معاندانہ رویہ رکھنے اور ان پر ظلم کرنے سے باز آجائیں لیکن وہ دنیاوی جاہ و حشم کے لالچ میں گستاخیاں کرتے رہے ۔اللہ کریم نے اپنے بندوں کو یہ اعجاز فضیلت عطا فرمایا ہے کہ ان کے ذاتی استعمال کی اشیاء بھی پاک ہوتیں اور ان میں بھی فیوض و برکات شامل ہوجاتے ہیں کہ جب کوئی فاسق ان کو استعمال کرنا چاہتا ہے تو ان میں کراہت پیدا ہوجاتی ہے اور وہ اسکو استعمال نہیں کرپاتے ۔

امام ابن حجر عسقلانی ؒ نے کتاب تہذیب التہذیب میں اور امام بیہقیؒ نے دلائل النبوۃ البیہقی میں شہادت امام حسینؓ کے دن کا یہ واقعہ نقل فرماتے ہوئے لکھا ہے کہ یزیدیوں آپؓ کو شہید کرنے کے بعد آپؓ کے لشکر سے ایک اونٹ کو پکڑا اور جشن کے طور پر اسکو ذبح کرکے پکایا ۔پھر جب اسکا گوشت کھانے لگے تو وہ جمے ہوئے خون کی مانند ہوگیا اور وہ اسکو چبا نہ سکے ۔سوچنے اور سمجھنے کی باتیں ہیں کہ واقعہ کربلا میں یزیدی لشکر رحمت کا طلب گار کیوں نہیں رہا تھا،وہ امام عالیٰ مقامؓ کی نسبت سے جڑے جانوروں اور اشیائے ضروریہ کو بھی اپنے استعمال میں لانے سے قاصر کیوں رہا تھا اور اس پر عذاب کی نشانیاں کیونکر ظاہر ہوتی تھیں؟؟دنیاوی طمع میں اندھے اور فاسق لوگ دراصل ان نعمتوں کے حق دار نہیں ہوتے اور ہر اُس انسان کے لئے عبرت کا نشان تھے کہ جو بھی آل محمد ﷺ پر ظلم کرے گا ،وہ آخرت میں تو جہنم میں جلے گا دنیا میں بھی اسکو سزا ملے گی۔

Advertisement

Source daily pakistan

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More