Advertisement

پاکستانی خلا باز خاتون نمیرہ سلیم نے چندریان ٹو مشن پر بھارتی اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن کو بڑا سرپرائز دیدیا

Advertisements

 پاکستانی خلائی باز نے بھارت کی اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن کو چندریان ٹو مشن پر مبارکباد پیش کر دی ۔ تفصیلات کے مطابق اپنے ایک بیان میں 44 سالہ نمیرہ سلیم نے کہا کہ میں چاند پر لینڈ کرنے کے لیے بھارت کے چندریان مشن ٹو پر بھارت اور بھارتی اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (ISRO) کو مبارکباد پیش کرتی ہوں۔ انہوں نے کہا کہ چندریان ٹو مشن جنوبی ایشیا کے لیے ایک بہت بڑا قدم ہے اس سے نہ صرف خطے بلکہ گلوبل اسپیس انڈسٹری کا سر بھی فخر سے بلند ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیا میں خلائی سیکٹر میں مقامی کامیابیاں قابل تحسین ہیں، اس سے قطعی کوئی فرق نہیں پڑتا کہ اس معاملے میں کس ملک کو کامیابی حاصل ہوتی ہے کیونکہ خلا میں مذہب ، ملک اور ایسی دوسری چیزیں ،جو ہمیں کُرہ ارض پر کسی بھی بنیاد پر تقسیم کریں ، کا کوئی وجود نہیں ہوتا۔

واضح رہے کہ 44 سالہ پاکستانی نژاد خلا باز خاتون نمیرہ سلیم گذشتہ 13 سال سے وہ برطانیہ میں خلائی سیاحت کے حوالے سے کام کر رہی ہیں۔نمیرہ سلیم 10 جنوری 2008ء کو جنوبی فرانس میں مقیم پاکستان سے تعلق رکھنے والی 35 سالہ مہم جو خاتون نمیرہ سلیم نے قطب جنوبی پر قدم رکھا اور وہاں پہلی مرتبہ پاکستان کا پرچم لہرانے کا اعزاز حاصل کیا۔یہ پرچم انہیں 24 دسمبر 2007ء کو پاکستان کے نگراں وزیراعظم محمد میاں سومرو نے دیا تھا۔ نمیرہ سلیم اس سے قبل 21 اپریل 2007ء کو قطب شمالی میں بھی پاکستان کا پرچم لہرا چکی تھیں۔ وہ پرچم انہیں 29 جنوری 2007ء کو جنرل (ر) پرویز مشرف نے عطا کیا تھا۔ نمیرہ سلیم پہلی پاکستانی خاتون تھیں جنہیں قطبین پر پہنچنے کا اعزاز حاصل ہوا تھا۔ نمیرہ خلائی سفر کے لئے لاکھوں لوگوں میں سے منتخب ہونے والی خاتون ہیں جنہیں ایک سال کے طویل غوروخوض کے بعد اس خلائی سفر کا حصہ بننے کے لیے منتخب کیا گیا تھا۔ انہوں نے 2015ء میں خلائی سفر کے ذریعے امن کے فروغ کے لئے ایک غیر منافع بخش ادارہ قائم کیا۔

Advertisement

Source daily ausaf

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More