Advertisement

’’ تعاون کریں آپکو مالا ما ل کردیں گے‘‘رائیونڈ میں مجھے نواز شریف نےمجھے کیا کرنے کا کہا تھا ؟ جج ارشد ملک کےتہلکہ انگیز انکشافات ، نیاپنڈورا باکس کھل گیا

Advertisements

احتساب عدالت کے جج ارشد ملک نے بیان حلفی میں اہم ترین انکشافات کر دیئے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق جج ارشد ملک نے اپنے بیان حلفی میں کہا کہ کیس کی سماعت کےدوران مجھ سے بار بار ملنے کی کوشش کی جاتی رہی ، 16سال پہلے کی ویڈیو دکھا کر مجھے دھمیکیاں دی گئیں جوملتان کی تھی ۔ ویڈیو کے بعد مجھے وارن کرتے ہوئے کہا جاتا کہ ہمارے ساتھ تعاون کریں اور پھر دھمکیوں کا سلسلہ چل پڑا ۔ کیس کی سماعت کے دوران مجھے رابطہ کرنا اور ملنے کی کوششیں ہوتی رہیں ، مجھے

رائیونڈ محل لے جایا گیااور نواز شریف سے ملاقات کروائی گئی ، ملاقات میں نواز شریف نے کہا کہ آپ ہمارے ساتھ تعاون کریں اس کے بدلے آپ کو مالا مال کر دیا جائے گا ۔ اپنی فیملی کو بتا دیا تھا کہ مجھے سنگین دھمکیاں دی جارہی ہیں اور میں شدید دبائو میں ہوں ۔ فیصلے کے بعد بھی مجھے دھمکیاں دے کر تعاون کرنے کا کہا گیا ۔ مجھے کہا گیا کہ ہمارے بتائے ہوئے جملے دیں ورنہ ویڈیو لیک کر دیں گے ۔ نواز شریف نے ملاقات میں کہا یہ لوگ آپ سے جیسا کہتے ہیں ویسا کرتے جائیں ، ناصر بٹ اور ایک شخص مجھے سے مسلسل رابطے میں رہے ۔

وزارت قانون وانصاف نے جج ارشد ملک کو ہٹانے کے معاملے پر کہاہے کہ خط موصول ہونے پر کارروائی کی جائیگی ۔ ترجمان نے کہاکہ خط موصول ہونے پر کارروائی کی جائے گی۔ ذرائع کے مطابق وزارت قانون خط موصول ہونے پر سمری صدر مملکت کو بھجوائیگی۔دوسری جانب پاکستان مسلم لیگ (ن )کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے احتساب عدالت کے جج کو ہٹانے پررد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ جج کے منصب سے ہٹنے کے بعد نوازشریف کو فی الفور رہا کیا جائے ۔ ایک بیان میں انہوںنے کہاکہ

احتساب عدالت کے جج کو ہٹانے کے بعد نواز شریف کے خلاف فیصلہ کالعدم ہو چکا ہے۔انہوںنے کہاکہ جج کے منصب سے ہٹنے کے بعد نوازشریف کو فی الفور رہا کیا جائے ۔انہوںنے کہاکہ نوازشریف کو جیل میں ایک منٹ بھی رکھنا اب غیر قانونی ہے،سچائی ثابت ہونے پر اللہ تعالی کا شکر ادا کرتے ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ ویڈیو اور اس سے جڑے تمام حقائق سچ ثابت ہوگئے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ نواز شریف کے خلاف دباؤ کے تحت دیے گئے فیصلے کالعدم قرار دیئے جائیں۔ انہوںنے کہاکہ جج ہٹانے کے بعد نواز شریف کو جیل میں رکھنے کا جواز ختم ہو گیا۔ انہوںنے کہاکہ انصاف کے تقاضے پورے کرتے ہوئے نواز شریف کو فی الفور رہا کیا جائے۔

Advertisement

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings