Advertisement

ٹوٹی ہوئی انگلی کے باوجود میچ کھیلنے کا فیصلہ کیوں کیا تھا؟ قومی ٹیم کی جیت میں اہم کردارا دا کرنے والے وہاب ریاض نے بتادیا

Advertisements

پاکستانی فاسٹ باوٴلر وہاب ریاض نے افغانستان سے پاکستان کے میچ جیتنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ زخمی ہونے کے بعد میچ کھیلنے یا نہ کھیلنے کا فیصلہ مجھ پر چھوڑ دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ مجھ سے پوچھا گیا کہ کتنی تکلیف برداشت کر دسکتے ہو، میں نے کہا کہ باوٴلنگ کر سکتا ہوں لیکن بیٹنگ اور فیلڈنگ کا پتا نہیں جس پر کپتان نے کہا کہ تم باوٴلنگ میں سو فیصد دے سکتے ہو،چلو کھیلو۔

وہاب ریاض نے کہا کہ کپتان سرفراز احمد کی اس بات سے مجھے حوصلہ ملا، میں نے سب کچھ اللہ پہ چھوڑ دیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ جب میں بیٹنگ کے لیے گیا تو بہت تکلیف میں تھا ۔ سٹار کرکٹر نے کہا کہ اللہ کا شکر ہے کہ ہم میچ جیت گئے،۔ یاد رہے کہ لیفٹ آرم فاسٹ باﺅلر وہاب ریاضدائیں ہاتھ پر چوٹ لگنے کے باوجود افغانستان کے میچ میں شریک ہوئے،وہ ہاتھ پر پٹی باندھ کر فیلڈنگ کررہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق فاسٹ باﺅلر حسن علی اورنوجوان محمد حسنین کی موجودگی میں ٹیم مینجمنٹ نے وہاب کو کھلانے کا خطرہ مول لیا اوروہاب ریاض نے ہمت دکھاتے ہوئے تکلیف کے باوجود میچ کھیلنے پر رضامندی ظاہر کی،میچ کے بعد ان کی انجری کا جائزہ لیا جائے گا اور توقع ظاہر کی جارہی ہے وہ پانچ جولائی کو بنگلہ دیش کے میچ میں شریک ہوں۔ پاکستانی ٹیم کے ترجمان رضا راشد کا کہنا ہے کہ وہاب ریاض کو ورلڈ کپ میچ سے قبل فیلڈنگ کرتے ہوئے دائیں ہاتھ کی چھوٹی انگلی کے نیچے چوٹ لگی جس سے سوجن ہوگئی،وہابریاض گزشتہ چند دن سے سخت تکلیف میں رہے ہیں اور انہوں نے درد ختم کرنے والی دوائیں استعمال کرکے اور پٹی باند ھ کر میچ میں شرکت کی،دو سال بعدپاکستان ٹیم میں آنے والے وہاب ریاض ٹورنامنٹ میں اچھی فارم میں ہیں،چوں کہ وہ بائیں ہاتھ سے باﺅلنگ کرتے ہیں اس لئے انہیں میچ کھلانے کا خطرہ مول لیا گیا۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ وہاب ریاض کو افغانستان کے میچ کے بعد چھ دن آرام ملے گا، امید ہے کہ وہ مکمل فٹ ہوجائیں گے۔

Advertisement

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings