Advertisement

جعلی اور فرضی بینک اکاونٹس کو قانونی بنانے کے لئے بائیو میٹر کی تصدیق نہ کرانے والوں کے بینک اکاونٹس کی بندش شروع،کھلبلی مچ گئی

Advertisements

جعلی اور فرضی بینک اکاونٹس کو قانونی بنانے کے لئے بائیو میٹر کی تصدیق نہ کرانے پر بینک اکاونٹس کے عارضی بندش شروع کردی گئی ہیں۔ اب اکاونٹس کو اس وقت آپریٹ کرنے کی اجازت دی جائیگی جب ان کے حقیقی مالکان متعلقہ برانچوں میں جا کر بائیو میٹرک کی تصدیق اور اکاونٹس کی ملکیتی فارم سائن کرنے کا مرحلہ مکمل کرینگے۔ 30جون کو ایمنسٹی سکیم کی مہلت ختم ہوتے ہی بائیو میٹرک تصدیق نہ کروانے والے بھاری مالیت والے اکاونٹس کی معلومات ایف بی آر کو فراہم کر دی جائیگی ایف بی آر نوٹس کے ذریعے ان

اکاونٹس ہو لڈرز سے آمدن کے ذرائع کی پوچھ گچھ کرینگے۔ 30جون تک بائیو میٹر ک کی تصدیق نہ کرانے والے بینک اکاونٹس میں نہ تو کوئی رقم جمع کروائی جا سکے گی او ر نہ ہی چیک اور اے ٹی ایمز کے ذریعے رقم نکلوائی جا سکے گی اور گزشتہ شام سے ہی بینک اکاونٹس عارضی منجمند ہونے کے بعد بائیو میٹرک تصدیق کا عمل تیز ہو گیا ہے او ربینکوں میں صارافین کا رش لگ گیا ہے چھوٹے تنخواہ داروں کے بینک اکاونٹس بھی منجمند کر دیئے گئے ہیں۔ اب بائیو میٹرک تصدیق کے بعد وہ 48گھنٹے بعد اپنے اکاونٹس آپریٹ کر سکیں گے۔ اس کے باعث ان چھوٹے اکاونٹ ہولڈروں کو روزمرہ اخراجات میں مشکلات کا سامنا ہے جعلی اور فرضی بینک اکاونٹس کو قانونی بنانے کے لئے بائیو میٹر کی تصدیق نہ کرانے پر بینک اکاونٹس کے عارضی بندش شروع کردی گئی ہیں۔ اب اکاونٹس کو اس وقت آپریٹ کرنے کی اجازت دی جائیگی جب ان کے حقیقی مالکان متعلقہ برانچوں میں جا کر بائیو میٹرک کی تصدیق اور اکاونٹس کی ملکیتی فارم سائن کرنے کا مرحلہ مکمل کرینگے۔ 30جون کو ایمنسٹی سکیم کی مہلت ختم ہوتے ہی بائیو میٹرک تصدیق نہ کروانے والے بھاری مالیت والے اکاونٹس کی معلومات ایف بی آر کو فراہم کر دی جائیگی

Advertisement

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings