یہ معیشت پر سیاست کرنے کا وقت نہیں بلکہ ۔۔۔وفاقی وزیر خسرو بختیار نے سیاسی جماعتوں کے سامنے ہاتھ جوڑ دیئے

10

وفاقی وزیر برائے تحفظ خوراک خسرو بختیار نے کہا ہے کہ ملک کے بڑے مسائل پر سیاست نہیں کرنی چاہیے،دس سال کیلئے ملک کے بڑے مسائل پر قومی پالیسی بنانے کی ضرورت ہے، جس میں تمام سیاسی جماعتوں کو ایک پیج پر ہونا ہوگا ، یہ معیشت پر سیاست کرنے کا وقت نہیں بلکہ نیشنل اکنامک چارٹر لانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ قومی اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئےخسرو بختیار  کا کہنا تھا کہ معاشی نمو ہی معیشت کی بہتری کا واحد حل نہیں بلکہ یہ دیکھنا بھی ضروری ہے کہ یہ گروتھ مستحکم ہے یا نہیں؟اگر ملک میں صرف درآمد کر کے اشیا استعمال کی جائیں تو ترقی کیسے ہوگی؟مسلم لیگ ن کے دورِ حکومت کے آغاز میں ایک ڈالر کی برآمدات کے مقابلے میں 1.3 ڈالر کی درآمدات تھیں جبکہ ان کی حکومت کے خاتمے کے وقت یہ تناسب ایک ڈالر برآمدات کے مقابلے میں 2.3 ڈالر کی درآمدات تک چلا گیا تھا،

پاکستان میں کھپت کی شرح94فیصد ہےاور پیداوارصفرہےجبکہ بھارت میں80فیصدہے۔انکا کہناتھاکہ معیشت کا پہیہ چلانے کےلیےکریڈٹ اور بینکس کو سیونگز کے ذریعے پیسہ حاصل ہوتا اور پاکستان میں سیونگز کی شرح صرف 10 فیصد ہے جبکہ بھارت میں یہ شرح 20 فیصد ہے،کئی دہائیوں سے معاشی ڈھانچے کی جانب توجہ ہی نہیں دی گئی اور زرعی شعبے میں محض نصف فیصد کی شرح نمو ہوئی۔