Advertisement

پاکستان کا وہ واحد شہر جہاں پانی کا مسئلہ اتنا سنگین ہو چکا کہ لوگوں کو ہجرت کرنی پڑ سکتی ہے

Advertisements

بلوچستان کے صوبائی دارلحکومت میں پانی کا مسئلہ سنگین ہوگیا۔۔چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ کوئٹہ میں پانی کامسئلہ اتناسنگین ہےکہ لوگوں کوہجرت کرناپڑسکتی ہے۔تفصیلات کے مطابق پاکستان میں پانی کا بحران شدید ہونے کا خدشہ ہے۔حالیہ صورتحال میں پاکستان میں پانی کی کمی کا بحران تیزی سے شدت اختیار کر رہا ہے۔

جہاں ایک طرف موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث پاکستان بے حد متاثر ہوا ہے، وہیں دوسری جانب بھارت نے نئے ڈیم بنا کر پاکستان کے دریاوں کا پانی روک لیا ہے۔ اس تمام صورتحال کے باوجود پاکستان میں بننے والی کوئی بھی حکومت اس مسئلے کو حل کرنے کیلئے سنجیدہ دکھائی نہیں دیتی۔ تاہم اس حوالے سے گزشتہ کچھ روز قبل سوشل میڈیا پر کالاباغ ڈیم کی تعمیر کے حوالے سے ایک طاقتور مہم شروع کی گئی ۔اس مہم کے بعد کالاباغ ڈیم کا معاملہ عدالت بھی جا پہنچا ہے اور اس حوالے سے خاصے فکر انگیز مباحثے قومی چینلز پر انعقاد پذیر ہو رہے ہیں جس میں ڈیموں کی تعمیر ،ممکنہ تنازعہ اور اسکے حل کے حوالے سے بات کی جا رہی ہے۔کچھ عرصہ قبل سپریم کورٹ آف پاکستان میں ڈیمز کی تعمیر سے متعلق کیس سنا دیا گیا جس کے مطابق مہمند اور دیامر بھاشا ڈیم کی فوری تعمیر کا حکم دیا اور اسکے ساتھ ہی ڈیموں کی تعمیر کے عطیات اکٹھے کرنے کے لیے بینک اکاونٹس بھی بنادئیے گئے جس میں اب تک خطیر رقم جمع کی جا چکی ہے ۔7ستمبر کو وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے کی جانے والی اپیل نے اس مہم میں نئی جان پھونک دی۔اس کے بعد پاکستان کی تمام مخیر ہستیاں اس معاملے میں ایک دوسرے پر سبقت لے جانے کی

فکر میں ہیں۔تاہم پاکستان میں پانی کا مسئلہ آنے والے وقتوں میں ایک بڑا مسئلہ بن کر ابھر سکتا ہے۔ماہرین کے مطابق اگر ہم نے ابھی سے پانی کے حوالے سے کام نہ کیا تو ہمیں خشک سالی کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔تاہم پاکستان کے کچھ شہر ایسے بھی ہیں جن میں پانی کا مسئلہ شدت اختیار کرتا جارہا ہے۔ان میں سے ایک شہر کوئٹہ بھی ہے ۔۔چیف جسٹس نے آج خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کوئٹہ میں پانی کامسئلہ اتناسنگین ہےکہ لوگوں کوہجرت کرناپڑسکتی ہے۔انکا یہ بھی کہنا تھا کہ دشمن تاک میں بیٹھےہیں کہ کسی طرح سےکوئی ڈیم نہ بننےدیاجائے۔آپ سب محافظ ہیں،آپ نےپہرہ دیناہےتاکہ ڈیم پایاتکمیل تک پہنچ سکیں۔اس تمام صورتحال کے باوجود پاکستان میں بننے والی کوئی بھی حکومت اس مسئلے کو حل کرنے کیلئے سنجیدہ دکھائی نہیں دیتی۔ تاہم اس حوالے سے گزشتہ کچھ روز قبل سوشل میڈیا پر کالاباغ ڈیم کی تعمیر کے حوالے سے ایک طاقتور مہم شروع کی گئی ۔اس مہم کے بعد کالاباغ ڈیم کا معاملہ عدالت بھی جا پہنچا ہے اور اس حوالے سے خاصے فکر انگیز مباحثے قومی چینلز پر انعقاد پذیر ہو رہے ہیں جس میں ڈیموں کی تعمیر ،ممکنہ تنازعہ اور اسکے حل کے حوالے سے بات کی جا رہی ہے۔کچھ عرصہ قبل سپریم کورٹ آف پاکستان میں ڈیمز کی تعمیر سے متعلق کیس سنا دیا گیا جس کے مطابق مہمند اور دیامر بھاشا ڈیم کی فوری تعمیر کا حکم دیا

اور اسکے ساتھ ہی ڈیموں کی تعمیر کے عطیات اکٹھے کرنے کے لیے بینک اکاونٹس بھی بنادئیے گئے جس میں اب تک خطیر رقم جمع کی جا چکی ہے ۔7ستمبر کو وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے کی جانے والی اپیل نے اس مہم میں نئی جان پھونک دی۔اس کے بعد پاکستان کی تمام مخیر ہستیاں اس معاملے میں ایک دوسرے پر سبقت لے جانے کی فکر میں ہیں۔تاہم پاکستان میں پانی کا مسئلہ آنے والے وقتوں میں ایک بڑا مسئلہ بن کر ابھر سکتا ہے۔ماہرین کے مطابق اگر ہم نے ابھی سے پانی کے حوالے سے کام نہ کیا تو ہمیں خشک سالی کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔تاہم پاکستان کے کچھ شہر ایسے بھی ہیں جن میں پانی کا مسئلہ شدت اختیار کرتا جارہا ہے۔ان میں سے ایک شہر کوئٹہ بھی ہے ۔۔چیف جسٹس نے آج خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کوئٹہ میں پانی کامسئلہ اتناسنگین ہےکہ لوگوں کوہجرت کرناپڑسکتی ہے۔انکا یہ بھی کہنا تھا کہ دشمن تاک میں بیٹھےہیں کہ کسی طرح سےکوئی ڈیم نہ بننےدیاجائے۔آپ سب محافظ ہیں،آپ نےپہرہ دیناہےتاکہ ڈیم پایاتکمیل تک پہنچ سکیں۔

Advertisement

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings