Advertisement

ن لیگ میں شامل ہونے کیلئے شہباز شریف کی آزاد امیدواروں کو بڑی پیشکش

Advertisements

نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے سینئیر صحافی اور تجزیہ کار کاشف عباسی نے کہا کہ شہباز شریف چاہتے تھے کہ وہ کسی طرح حکومت بنا لیں ۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف نے آزاد اُمیدواروں کو منانے دس کروڑ روپے کی پیشکش بھی کی جو بعد میں بڑھا کر پندرہ کروڑ روپے کر دی گئی۔ شہباز شریف نے آزاد اُمیدواروں کو دس، دس کروڑ روپے اور ایک ، ایک وزارت کی پیشکش کی تھی۔

لیکن پھر شہباز شریف کو یہ احساس ہو گیا کہ اس مرتبہ ان کے پیسے کام نہیں کریں گے۔ دوسرا مسئلہ یہ بھی تھا کہ شہباز شریف کو اس بات کا احساس ہو گیا ، الیکشن سے پہلے نواز شریف کی واپسی سے لے کر الیکشن کے نتائج تک شہباز شریف کو احساس ہو گیا تھا کہ وہ پارٹی کو کنٹرول نہیں کر سکتے۔انہوں نے محسوس کیا کہ سیاسی جماعت کے جو سربراہ ہیں، یا پارٹی میں جس کی چلتی ہے اور فیصلے لینے کے لیے جس کی طرف دیکھا جاتا ہے، جو لیڈر ہے وہ صرف اور صرف نواز شریف ہیں، اور ان کے اپنے پلے کچھ نہیں ہے۔شہباز شریف نے الیکشن سے پہلے کوششیں کی تھیں کہ اگر میاں صاحب جیل چلے بھی گئے ہیں تو ہم کسی طرح اقتدار واپس لے لیں ،اور اقتدار اگر ہمارے خاندان میں آ گیا تو پھر ہم حکومت بھی چلائیں گے اور پارٹی بھی چلائیں گے اور دونوں چیزوں کو ساتھ لے کر چلنے کی کوشش کریں گے۔ لیکن شہباز شریف ان دونوں چیزوں میں ہی بُری طرح ناکام ہو گئے اور اب انہیں احساس ہو رہا ہے کہ شاید ان کے پلے کچھ نہیں ہے اور سب کچھ نواز شریف کے ہی رحم و کرم پر ہے۔ جب تک میاں صاحب جیل سے باہر نہیں آتے بس وہ نام کے ہی پارٹی صدر ہیں،

اور انہیں اس بات کا بھی احساس ہو گیا ہے کہ وہ اس پارٹی کو بھی نہیں چلا سکتے۔

Advertisement

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings