Advertisement

مجھے پہلی بار قاری صاحب نے جنسی ہراساں کیا، اس کے بعد ڈرائیور اور پھر ۔۔۔۔

Advertisements

زینب زیادتی کا واقعہ منظر عام پر آنے کے بعد عوام میں ایک نئی بحث چھڑ گئی ، ایک جانب لوگ زینب کو انصاف فراہم کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں تو دوسری جانب اپنے بچوں کو ایسے واقعات سے محفوظ رکھنے کے لئے تجاویز بھی سامنے آرہی ہیں، ایسے میں پاکستانی اداکارہ نادیہ جمیل بھی سامنے آگئی ہیں اور انہوں نے اپنے ساتھ ہونے والے جنسی ہراسگی کے واقعات بیان کردئیے ہیں۔
سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ”ٹوئٹر“ پر ٹوئٹ کرتے ہوئے پاکستانی اداکارہ نادیہ جمیل کا کہنا تھا کہ میں جب چار سال کی تھی ، اس وقت مجھے جنسی ہراسگی کا نشانہ بنایا گیا۔ میرے ساتھ پہلی مرتبہ مجھے میرے قاری صاحب نے جنسی طور پر ہراساں کیا، اس کے بعد میرے ڈرائیور اور بعد ازاں ایک پڑھے لکھے رئیس کے بیٹے نے مجھے جنسی استحصال کا نشانہ بنایا۔ اداکارہ کا مزید کہنا تھا کہ میں چار سال کی تھی جب مجھے اس سب کا سامنا کرنا پڑا،کالج میں پہنچ کر اس کا حساب لگانا ہی مشکل ہوگیا تھا۔ لوگ مجھ سے کہتے کہ اپنے خاندان کی عزت کے لئے اس پر بات نہ کرو ، کیا میرے خاندان کی عزت میرے جسم میں پنہاں ہے؟ میں ایک قابل فخر ، مضبوط اعصاب کی مالک اور پیار کرنے والی عورت ہوں ،جس نے ان حالات کا مقابلہ کیا۔


نادیہ جمیل کا مزید کہنا تھا کہ اب میں لندن کے ایک کاروباری شخص سے شادی کر کے ہنسی خوشی زندگی بسر کر رہی ہوں ،میرا خاندان اب بھی مجھے خاموش رہنے کا کہہ رہا ہے،میرے بچوں اور میری ذات کے لئے کوئی بھی بات شرمندگی کا باعث نہیں ہے ، مجھے اپنی ذات پر فخر ہے۔

Advertisement

x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings