Advertisement

حضرتِ سَیِّدُنا اسرافیل علیہ السلام نے جب آقا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو رکوع سے سر اٹھانے سے روکا

Advertisements

ایک دن حضور اکرم ﷺ نے نماز عصر پڑھائی تو پہلا رکوع اتنا طویل فرمایا کہ گمان ہوا کہ شاید رکوع سے سر نہ اٹھائیں گے ۔پھر جب آپ ﷺنے رکوع سے سر اٹھالیا ۔

نماز ادا فرما لینے کے بعد آپ ﷺنے اپنا رُخِ اَنور محراب سے ایک جانب پھیر کر فرمایا کہ ”میرا بھائی اور چچا زاد علی بن ابو طالب کہاں ہے ؟” حضرتِ سَیِّدُنا علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے آخری صفوں سے عرض کیا :” لبیک ! میں حاضر ہوں یارسول اللہﷺ ۔۔۔!” آپ ﷺنے فرمایا: ”اے ابو الحسن ! میرے قریب آجاؤ ۔” چنانچہ حضرتِ سَیِّدُنا علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ آپ ﷺ کے قریب آکر بیٹھ گئے۔

آپ ﷺ نے فرمایا:” ابو الحسن ! کیا تم نے اگلی صف کے وہ فضائل نہیں سنے جو اللہ عزوجل نے مجھے بیان فرمائے ہیں ؟” عرض کیا:” کیوں نہیں، یارسول اللہ ﷺ ۔۔۔!”ارشاد فرمایا:” پھر کس چیز نے تمہیں پہلی صف اور تکبیر اولیٰ سے دور کردیا ،کیا حسن اور حسین (رضی اللہ تعالیٰ عنہما) کی محبت نے تمہیں مشغول کردیا تھا ؟” عرض کی :” ان کی محبت اللہ تعالیٰ کی محبت میں کیسے رکاوٹ ڈال سکتی ہے۔” آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا :” پھر کس چیز نے تمہیں روکے رکھا ؟”

عرض کیا کہ ”جب حضرتِ سَیِّدُنا بلال رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اذان دی تھی میں اس وقت مسجد ہی میں تھا اور دو رکعتیں ا دا کی تھیں پھر جب حضرتِ سَیِّدُنا بلال رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اقامت کہی تو میں آپ ﷺ کے ساتھ تکبیرِ اُولیٰ میں شامل ہوا ۔پھر مجھے وضو میں شبہ ہوا تو میں مسجد سے نکل کر حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے گھر چلا گیا اور جا کر حسن و حسین (رضی اللہ تعالیٰ عنہما )کو پکارا مگر کسی نے میری پکار کا جواب نہ دیا تو میری حالت اس عورت کی طرح ہوگئی جس کا بچہ گم ہوجاتا ہے یا ہانڈی میں ابلنے والے دانے جیسی ہوگئی ۔

میں پانی تلاش کررہا تھا کہ مجھے اپنے دائیں جانب ایک آواز سنائی دی اور سبز رومال سے ڈھکا ہوا سونے کا پیالہ میرے سامنے آگیا۔ میں نے رومال ہٹایا تو اس میں دودھ سے زیادہ سفید، شہد سے زیادہ میٹھا اور مکھن سے زیادہ نرم پانی موجود تھا۔ میں نے نماز کے لئے وضوکیا پھر رومال سے تری صاف کی اور پیالے کو ڈھانپ دیا ۔پھرمیں نے پیچھے مڑ کر دیکھا تو مجھے کوئی نظر نہ آیا نہ ہی مجھے یہ معلوم ہوسکا کہ پیالہ کس نے رکھا اور کس نے اٹھایا ؟”

آپ ﷺ نے غیب کی خبر دیتے ہوئے مسکرا کر ارشادفرمایا:” مرحبا! مرحبا! اے ابو الحسن !کیا تم جانتے ہو :” تمہیں پانی کا پیالہ اور رومال کس نے دیا تھا؟” عرض کی :” اللہ اور اس کے رسول عزوجل و ﷺ بہتر جانتے ہیں ۔”ارشاد فرمایا:” پیالہ تمہارے پاس جبرئیلِ امین علیہ السلام لے کر آئے اور اس میں حظیرۃ القدس کا پانی تھا اوررومال تمہیں حضرتِ سَیِّدُنا میکائیل علیہ السلام نے دیا تھا ،حضرتِ سَیِّدُنا اسرافیل علیہ السلام نے مجھے رکوع سے سر اٹھانے سے روکے رکھا یہاں تک کہ تم اس رکعت میں آکر مل گئے، اے ابو الحسن ! جو تم سے محبت کریگا اللہ عزوجل اس سے محبت کریگا اور جو تم سے بغض رکھے گا اللہ عزوجل اسے ہلاک کردے گا ۔”

(اللہ عزوجل کی اُن پر رحمت ہواور اُن کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔آمین )

Advertisement

Source Dawateislami.social
x

We use cookies to give you the best online experience. By agreeing you accept the use of cookies in accordance with our cookie policy.

I accept I decline Privacy Center Privacy Settings